حکومت پنجاب سود سے پاک زرعی ای۔ کریڈٹ اسکیم

حکومت پنجاب مارک اپ فری ایگری. ای کریڈٹ اسکیم چھوٹے کسانوں کے لیے

حکومت پنجاب کی زرعی پیداوار بڑھانے اور چھوٹے کسانوں اورغریب دھکان کی مالی حالت بہتر بنانے کی کوشش میں شامل ہونے کے لیے زرعی ترقیاتی بینک نے اس سکیم کو صوبہ پنجاب میں جاری کرنےکا فیصلہ کیا ہے۔اس سکیم کے تحت جو قرضہ جاری کیا جاےگا۔ اس کی لینڈ ریکارڈ مینیجمنٹ انفارمیشن ٹیکنالوجی بورڈ کی طرف سے مقرر کردہ سہولت مراکز میں رجسٹر یشن کی سہولت میسر ہو گی۔کھاد،بیج کیڑے مار ادوایات وغیرہ کے لیے مارک اپ فری قرضے5ایکٹرتک فراہم کیے جائیں گے۔  قرض کی فراہمی آسان اکاؤنٹ کے ساتھ منسلک Teleos موبائل کے ذریعے کسانوں کو ہوگی۔

شرائط و ضوابط

دائرہ کار

اس سکیم کو زرعی ترقیاتی بینک کےزریعے صوبہ پنجاب کے تمام اضلاع میں شروع کیا گیا ہے۔

اہلیت
  • ایسے تمام کسان جن کے پاس ڈھائی ایکٹر سےساڑھےبارہ ایکٹر تک کی زمینیں زیرملکیت ہوں وہ اس سکیم سے فائدہ اٹھا سکیں گے۔تاہم اس سکیم پررعائیتی مارک اپ صرف 5ایکٹر تک زمین مالکان کو بروقت ادائیگی پر پنجاب حکومت ادا کرے گی۔
  • درخواست دھندہ کسان اس یونین کونسل کا رہائشی ہونا ضروری ہے جہاں پر اِس کی زمین واقع ہو۔
  • انفارمیشن ٹیکنالوجی بورڈ اورلینڈ ریکارڈ مینیجمنٹ سسٹم گورنمنٹ آف پنجاب سہولت مراکزچھوٹے کاشتکاروں کی رجسٹر یشن کی  مفت سہولت فراہم کرےگا۔
  • شفاف CWR کے حامل درخواست گزار
  • ORR کی درجہ بندی کی حد  4 کے حامل افراد / درخواست گزار۔
قرضہ کی مدت

یہ سکیم 17-2016 سے لےکر 21-2020 تک ( پانچ سالوں کے لیے بالترتیب ربیع اور خریف کی فصلوں کے لیے دستیاب ہوگی۔)

مطلوبہ دستاویزات
  • لون کیس فائل۔
  • الیکٹرانک پاس بک /زرعی پاس بک۔
  • خسرہ گرداوری ہمراہ نقل انتقال جو کہ زرعی ترقیاتی بینک کے پاس رہن شدہ ہو۔
  • دو عدد تصاویر اور شناختی کارڈ کی ںقل علاوہ ازیں ضروری ریونیو ریکارڑ بوقت ضرورت۔
زیادہ سے زیادہ قرضہ کی حد

اس سکیم کے لئیے زیادہ سے زیادہ قرضہ کی حد زیرکاشت فصلات کے مطابق تین لاکھ پچاس ہزار روپے تک ہے ۔ جوکہ ایک قسط میں ادا کیا جائے گا ۔

قرض کی حد
  • فصل ربیع کے لئیے تیس ہزار روپے فی ایکڑز
  • فصلِ خریف کے لئیے چالیس ہزار روپے فی ایکڑز
ضمانت/ سکیوریٹی

تمام تر قابل قبول ضمانتیں جائیدادو زمینیں بشمول زرعی زمین جن کا اندراج پہلے ہی سے زرعی پاس بک یا الیکٹرانک پاس بک میں ہو۔

بیمہ انشورنس

سٹیٹ بینک آف پاکستان اور وفاقی حکومت کی ہدایت کے مطابق قرض برائے گندم ،کپاس، چاول اور مکئ بیمہ شدہ ہوگا۔

قرض کی واپسی کا جدول

اِس سکیم کے تحت فصل ربیع کے لیے جاری ھونے والے قرضے کی وصولی (یکم اکتوبر سے 31 مارچ تک) کی وصولی 7جولائ کو ہوگی ۔جبکہ فصل خریف کے لیے جاری ھونے والے قرضے کی وصولی (یکم مارچ سے30 ستمبر )کی وصولی 7جنوری کو ہوگی۔

شرح مارک اپ

اِس قرض پر حکومت پنجاب زرعی بینک کو 12.5 سالانہ مارک اپ ادا کرے گی۔ بشرطیکہ قرضدار (قرض حاصل کرنیوالا) اپنی قسط بروقت واپس کرے ۔ بر وقت قسط واپس نہ کرنیکی صورت میں زمیندار مارک اپ کا بوجھ خود برداشت کریگا جوبینک کی پالیسی کے مطابق ھو گا۔ پہلےدو سالوں کے دوران قرضدارسے کوئی مارک اپ وصول نہیں کیا جائےگا۔جبکہ تیسرے چوتھے اور پانچویں سال قرضدار4فیصد،8فیصداور12فیصد سالانہ کے حساب سے مارک اپ ادا کرنے کا پابند ہو گا ۔

قرضے کے استعمال کی تصدیق

قرضے کی صحیح اور بروقت استعمال کی تصدیق چارٹرڈاکاءونٹینٹ فرموں کے زریعے حکومت ِپنجاب بذاتِ خود کرے گی ۔ تاہم بینک کا موبائل کریڈٹ آفیسر قرضوں کی صحیح اور مقررہ مدت میں استعمال کی جانچ پڑتال کا مکمل ذمہ دار ہوگا ۔ علاوہ ازیں برانچ مینیجر، زونل چیف اور بینک کے انٹرنل آڈیٹرز صاحبان بھی قرضہ کے صحیح اور درست استعمال کے ذمہ دار ہونگے ۔

جانچ پڑتال

بنک ہزا کی یہ زمے داری ہو گی کہ وہ تشخیصی فرم کو یہ سہولت فراہم کرے کہ محکمہ ذراعت کے تعین کردہ قرض خواہوں کا آڈٹ کرے جو کہ پنجاب حکومت لاہور کے مقرر کردہ ہیں۔

متعلقہ دستاویزات

اردو اردو

پیسے بھیجنا اور وصول کرنا

زرعی ترقیاتی بینک لمیٹڈ کی اپلی کیشن کے زریعے بہت آسان ہے۔

جلد آ رہا ہے

اپنے ان باکس میں تازہ ترین مضامین اور اعلانات حاصل کریں

اِس ویب سائٹ کے بہترین ویو کے لیے اسے IE10 یا کسی بھی نئے براؤزرمیں کھولیں